تازہ ترین
outline
selfie

کیا سیلفی بنانا صحت کےلیے خطرے کا باعث ہے؟

جب آپ اپنی سیلفی بنانا چاہتےہیں تو اس وقت غور سے دیکھیں تو آپ کا چہرہ اچانک متغیر ہونا شروع ہوجاتا ہے۔ آپ دیکھیں گے کہ چہرہ عام حالت میں آئینے میں دکھائی دینے سے کافی مختلف نظر آئے گا۔

سیلفی لیتے وقت آپ اپنے چہرے کی حقیقی کیفیت کو دیکھتے ہیں جب کہ عام آئینےمیں آپ اپنے چہرے کو زیادہ چمکتا اور کھلا ہوا محسوس کرتے ہیں۔

آپ سیلفی کے وقت غورکریں کہ آپ کی ناک عام حالت نسبت بڑی نظر آتی ہے۔

یہاں اس خطرناک امر کی طرف توجہ دلانا مقصود ہےکہ سیلفی بہ ذات خود آپ کی صحت کے لیے نقصان دہ ہوسکتی ہے۔ سیلفی کے موقع پر ناک جسم کا وہ حصہ ہوتا ہے جو زیادہ واضح دکھائی دیتا ہے۔

برطانوی اخبار’میٹرو‘ میں شائع ہونے والی ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ سیلفی میں انسانی ناک عام قدرتی حالات میں نظرآنے والی ناک سے تین گنا بڑا لگتا ہے۔ ناک چہرے کے30 فی صد حصے پر پھیلی نظر آتی ہے۔

ایسا اس لیے ہوتا ہے کہ جب آپ بہت قریب سے کسی چیز کو دیکھتے ہیں تو وہ بہت بڑی اور دور سےدیکھتے ہیں تو وہ چھوٹی نظرآتی ہیں۔

ناک، کان اور گلے کے ماہر ڈاکٹر بوریس باکسھوفرا کا کہنا ہےکہ اگرآپ چہرے سے 12 انچ کے فاصلے سے سیلفی بناتے ہیں تو مردوں کی ناک اصل کی نسبت 30 فی صد بڑی نظرآتی ہے جبکہ خواتین کی ناک 29 فی صد بڑی لگتی ہے۔

تاہم کسی بھی حجم کی اصل حالت میں تصویر پانچ فٹ کے فاصلے سے بنائی جاسکتی ہے۔ اس فاصلے سے زیادہ دور جائیں گے تو اس کے نتیجے میں جسم زیادہ چھوٹا اور قریب آئیں گے تو چہرے کا سائز بڑا ہوتا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*