تازہ ترین
outline

آرمی چیف کو توسیع دینے کا حکم معطل،جنرل باجوہ سمیت تمام فریقین سے جواب طلب

سپریم کورٹ نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کو مدت ملازمت میں توسیع دیئے جانے کا نوٹیفکیشن معطل کردیا ہے جبکہ جنرل قمر جاوید باجوہ سمیت تمام متعلقہ فریقین سے جواب طلب کرتے ہوئے سماعت بدھ تک ملتوی کردی ہے

سپریم کورٹ میں ریاض حنیف راہی ایڈوکیٹ کی طرف سے ایک درخواست دائر کی گئی تھی جس میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کو ایکسٹینشن دینے کے فیصلے پر اعتراضات اٹھائے گئے

منگل کی صبح چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے سماعت شروع کی درخواست گذار کی طرف سے ہاتھ سے لکھی ایک درخواست موصول ہوئی جس میں یہ پٹیشن واپس لینے کی استدعا کی گئی سپریم کورٹ نے یہ درخواست مسترد کرتے ہوئے اس معاملے کو ازخود نوٹس میں بدل دیا یوں یہ موجودہ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کا پہلا سوموٹو کیس بن گیا

دوران سماعت بتایا گیا کی کابینہ کے 25 میں سے 11 ارکان نے ایکسٹینشن کی حمایت کی جس پر عدالت نے ریمارکس دیئے کہ کابینہ کی اکثریت نے ایکسٹیشن کے معاملے کو مسترد کردیا

عدالت نے یہ سوال بھی اُٹھایا کہ مدت ملازمت میں توسیع صدر مملکت کی طرف سے دی جا سکتی ہے مگر وزیراعظم نے کیسے توسیع دیدی ۔پہلے صدر نے نوٹیفکیشن جاری کی پھر کابینہ سے منظوری لی گئی

سپریم کورٹ نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی مدت ملازمت میں توسیع کا نوٹیفکیشن معطل کردیا اور مزید سماعت بدھ تک ملتوی کردی

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*