تازہ ترین
outline

پی ٹی آئی کا منی بجٹ ،کیا مہنگا ہوا ،کیا سستا ؟

تحریک انصاف کی حکومت نے دوسرا جبکہ اس مالی سال میں تیسرا بجٹ قومی اسمبلی میں پیش کر دیا گیا ہے جسے منی بجٹ کہا جا رہا ہے مگر وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر اسے بجٹ میں اصلاحات کا نام دینے پر اصرار کرتے نظر آتے ہیں

اسد عمر نے منی بجٹ کی تقریر شروع کی تو اپوزیشن نے جھوٹے ،جھوٹے کے نعرے لگانا شروع کر دیئے -مگر اسد عمر نے جارحانہ انداز میں اپوزیشن کو کڑی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وزیر خزانہ اسد عمر نے کہا کہ میرے دائیں جانب والوں کے پاس پچھلے دس اور پانچ سال حکومت تھی، یہ عوام کے لیے کیا چھوڑ کر گئے؟ آج سے دو سال پہلے معاشی ماہرین نے خطرے کی نشاندہی کی، حکومت کو آگے الیکشن نظر آرہا تھا اس لیے انہوں نے بجائے اصلاح کے الیکشن خریدنے کی کوشش کی، انہوں نے اپنا بنایا بجٹ خسارہ ہی 900 ارب سے زیادہ بڑھادیا، اب وہ پیسہ کہاں سے آئے گا؟ کیا سوئس بینک سے آئے گا؟ اب وہ قرضہ عوام نے ادا کرنا ہے۔

اسد عمر کے چھوٹی صنعتوں اور کاروباری اداروں کو قرض پر ٹیکس کی شرح میں کمی کا اعلان کیا اور اس کےساتھ ہی زرعی قرضوں پر ٹیکس کی شرح بھی 39 سے کم کرکے 20 فیصد کرنے کا اعلان کیا

اسد عمر نے قومی اسمبلی میں بجٹ تجاوز پیش کرتے ہوئے کہا کہ ٹیکس ریٹرنز فائل نہ کرنے والے افراد زیادہ ٹیکس دے کر 1300 سی سی تک گاڑی خرید سکیں گے جبکہ بے گھر افراد کو قرض حسنہ فراہم کرنے کے لیے پانچ ارب روپے مختص کرنے کا اعلان بھی کیا

منی بجٹ کے اہم نکات کچھ یوں ہیں

شادی ہالز پر عائد ٹیکس 20 ہزار سے کم کرکے 5 ہزار کرنے کا اعلان
بے گھر افراد کے لیئےپانچ ارب روپے کی قرضہ حسنہ اسکیم لا نے کا اعلان

بنک سے رقم نکلوانے پر فائلرز کے لیے 0.3 فیصد ود ہولڈنگ ٹیکس ختم کرنے کا اعلان

چھوٹی صنعتوں کی آمدن پر عائد ٹیکس 39 فیصد سے کم کرکے 20 فیصد کرنے کا اعلان

اخبارات کے لیئے نیوز پرنٹ کی درآمد پر امپورٹ ڈیوٹی سے استثنیٰ دینے کا اعلان

1800 سی سی سے بڑی گاڑیوں پر ٹیکس کی شرح بڑھانے کا اعلان

اس کے علاوہ موبائل فون مہنگے کر دیئے گئے ہیں جن کی تفصیل کچھ یوں ہے:

30 ڈالر سے کم قیمت کے موبائل پر سیلز ٹیکس 150 روپے ہو گا
30 سے 100 ڈالر قیمت کے درآمدی موبائل پر 1470 روپے سیلز ٹیکس عائد
100 سے 200 ڈالر قیمت کے درآمدی موبائل پر 1870 روپے سیلز ٹیکس عائد
200 سے 350 ڈالر قیمت کے درآمدی موبائل پر 1930 روپے سیلز ٹیکس عائد
350 سے 500 ڈالر قیمت کے درآمدی موبائل پر سیلز ٹیکس 6000 روپے سیلز ٹیکس عائد
500 ڈالر سے زائد قیمت کے درآمدی موبائل پر 10300 روپے سیلز ٹیکس عائد

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*