تازہ ترین
outline

چین نے نیا “چن چڑھانے“ کا اعلان کر دیا

چین کی حیرت انگیز مصنوعات تو دنیا بھر میں مقبول ہیں ہی مگراب چین نے ایک ایسے منصوبے پر کام شروع کر دیا ہے جو اس نوعیت کی پہلی سنجیدہ کوشش ہو سکتی ہے

اس منصوبے پر کام کرنے والی چینی کمپنی نے اعلان کیا ہے کہ وہ ایک ایسا مصنوعی چاند آسمان پر چسپاں کرنے کی تیاریوں میں ہیں جو اصل چاند کی طرح فضائوں کو اپنی روشنی سے منور کردے گا

چینی اخبار ‘پیپلز ڈیلی’ کے مطابق ایک نجی خلائی انسٹی ٹیوٹ چینگ ڈو 2020 تک اس چاند کو خلا میں بھیجنے کا منصوبہ بنا رہا ہے، اور یہ اتنا روشن ہو گا کہ سٹریٹ لائٹس کی ضرورت نہیں رہے گی۔

یہ خبر سامنے آنے کے بعد دنیا بھر سے سوالات، شکوک و شبہات، بلکہ ہنسی مذاق کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے اور سوشل میڈیا پر بھی بھانت بھانت کے تبصرے ہو رہے ہیں

منصوبے کی کچھ زیادہ تفصیلات سامنے نہیں آ سکیں۔ پیپلز ڈیلی کے مطابق چینگ ڈو ائیروسپیس سائنس انسٹی ٹیوٹ کے چیئرمین وُو چُن فینگ نے بتایا کہ اس منصوبے کا تجربہ چند برس قبل کیا گیا تھا اور اب 2020 تک اس کا آغاز کرنے کے لیے درکار ٹیکنالوجی تیار ہے۔

وُو نے چائنا ڈیلی کو بتایا کہ 2022 تک بہت بڑے حجم والے آئینے خلا میں بھیج دیے جائیں گے۔

چینی اخبار نے لکھا ہے کہ یہ نقلی چاند آئینے کی طرح کام کرتے ہوئے سورج کی روشنی واپس زمین پر پھینکے گا۔

یہ زمین سے 500 کلومیٹر کی بلندی پر مدار میں گردش کرے گا۔ وو نے کہا کہ اس کی مدد سے دس کلومیٹر سے لے کر 80 کلومیٹر تک کے علاقے کو روشن کیا جا سکے گا اور یہ اصل چاند سے آٹھ گنا زیادہ چمکیلا ہو گا۔

آخر یہ نیا “چن چڑھانے “ کی ضرورت کیا ہے اس حوالے سے ماہرین کا کہنا ہے کہ اس کا مقصد ہے پیسہ بچانا۔ بظاہر یہ بات مضحکہ خیز نظر آتی ہے، لیکن چینگ ڈو کے حکام کا کہنا ہے کہ مصنوعی چاند سڑکوں پر بجلی کے لیمپوں سے زیادہ سستا پڑے گا۔

وو نے کہا کہ 50 مربع کلومیٹر کے علاقے کو مصنوعی چاند سے روشن کرنے سے سالانہ پونے دو کروڑ ڈالر کی بجلی کی بچت ہو سکے گی۔

اس کے علاوہ یہ چاند کسی تباہی، مثلاً زلزلے، کے بعد بجلی کی فراہمی سے محروم علاقوں کو بھی روشن کر سکے گا۔

ماہرین کے مطابق یہ منصوبہ واقعی طویل مدت کے لیے سستا پڑے گا۔

سکاٹ لینڈ کی یونیورسٹی آف گلاسگو میں سپیس سسٹمز انجینیئرنگ کے لیکچرر ڈاکٹر میٹیو سیریوٹی کہتے ہیں کہ سائنسی نقطۂ نظر سے یہ بالکل ممکن ہے۔

تاہم کسی مخصوص علاقے کو روشن کرنے کے لیے اس چاند کو جیو سٹیشنری مدار میں رہنا پڑے گا جو زمین سے 37 ہزار کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔

ڈاکٹر سیریوٹی کے مطابق اتنے فاصلے سے چاند کو چلانے میں دو مسائل آڑے آئیں گے۔ ایک تو یہ کہ اس چاند کا حجم بےحد بڑا ہونا چاہیے، دوسرے یہ کہ اس کا رخ بالکل درست ہونا چاہیے ورنہ یہ کسی اور علاقے پر روشنی ڈالنے لگے گا۔

ہاربن انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی کے ڈائریکٹر کانگ وائیمن نے کہا کہ یہ چاند صبح کی روشنی کی مانند مدھم ہو گا اور اس سے جانوروں کی عادات پر فرق نہیں پڑے گا۔

تاہم چینی سوشل میڈیا کے صارفین نے شکوک کا اظہار کیا ہے۔

بعض لوگوں نے لکھا کہ اس سے جانوروں کی رات دن کی عادات متاثر ہوں گی کیوں کہ انھیں پتہ نہیں چلے گا کہ رات ہے یا دن۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*