تازہ ترین
outline
hindu God Karishna

ہندوئوں کے بھگوان گورے یا کالے ؟

نیو دہلی (نمائندہ آئوٹ لائن ) گوری رنگت ایشیائی باشندوں کی کمزوری ہے یہی وجہ ہے کہ بھارت میں رنگ گورا کرنے والی کریمیں ،جیل ،صابن اور دیگر کاسمیٹک پراڈکٹس کی بہت مانگ ہے اور دلچسپ بات یہ ہے کہ گورا ہونے کی خواہش محض خواتین تک محدود نہیں بلکہ مرد حضرات بھی سفید رنگت پانا چاہتے ہیًں

بھارت میں گوری رنگت کا یہ جادو اس قدر سر چڑھ کر بول رہا ہے کہ ہندو مذہب کے دیوی دیوتائوں کے بت ہوں یا پھر پوسٹرز ان تصویروں میں انہیں بھی گورا ہی دکھایا جا تا ہے مثال کے طور پر کرشنا کی رنگت تو قدرتی طور پر گندمی تھی مگر بھارت میں ان کے جتنے بھی پوسٹرز دکھائی دیتے ہیں انہیں دیکھ کر یہی محسوس ہوتا ہے کہ بھگوان کرشنا بہت سرخ و سفید تھےHindu God Durga

اسی طرح لکشمی دیوی کو بہت گورا چٹا دکھایا جاتا ہے کیونکہ ہر شخص کی خواہش ہوتی ہے کہ اس کے گھر لکشمی دیوی جیسی بہو آئے اسی طرح ہاتھی کی شکل جیسے بھگوان گنیش کے بھی سب پوسٹرز دیکھ کر یوں محسوس ہوتا ہے جیسے بھگوان گنیش بہت گورا ہے حالانکہ پورے بھارت میں چراغ لیکر ڈھونڈیں تو بھی کوئی سفید چمڑی والا ہاتھی نہیں ڈھونڈا جا سکتا

بھارت میں یہ مہم بہت مرتبہ چلائی گئی کہ گوری یا کالی رنگت سے کوئی فرق نہیں پڑتا ،انسان کو اس کے کردار سے جانچنا چاہئے مگر اس نوعیت کی کوئی مہم جوئی کامیاب نہیں ہو سکی لیکن اب بھارتی شہر چنائے کے فلم ساز سندر اور فوٹو گرافر نریش نے مل کر ایک ایسی مہم شروع کی جس کے نتیجہ خیز ہونے کی توقع ظاہر کی جا رہی ہے

سندر اور نریش نے ملک بھر سے سانولی رنگت کے ایسے نوجوان لڑکے اور لڑکیاں جمع کیں جنہیں ماڈلنگ کا شوق ہے اور انہیں بھگوان کا روپ دیکر ان کا فوٹو شوٹ کیا اور پھر ان گندمی یا سانولی رنگت کے بھگوانوں کو معاشرے میں پھیلانے کی کوشش کی تاکہ جب لوگوں کو یہ لگے گا کہ بھگوان بھی پکے رنگ کے ہو سکتے ہیں تو انہیں اپنی سیاہ رنگت پر احساس کمتری نہیں ہو گا

بھارتی فلم ساز سندر اور فوٹو گرافر نریش کے مطابق اس مہم کے نہایت مثبت نتائج سامنے آئے ہیں اور معاشرے کی طرف سے حوصلہ افزا ردعمل دیکھنے کا آ رہا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*