outline

مسلم لیگ(ن) کا پنجاب اسمبلی کے باہر احتجاج ،معطل ارکان کی بحالی تک ایوان میں نہ جانے کا اعلان

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے ارکان پنجاب اسمبلی نے اجلاس میں شرکت کرنے کے بجائے ایوان کی سیڑھیوں میں شدید احتجاج کرتے ہوئے اپنے 6 اراکین کی ایوان میں داخلے پر پابندی ہٹانے تک اسمبلی اجلاس میں شرکت نہ کرنے کا اعلان کیا ہے

واضح رہے کہ 16 اکتوبر کو بجٹ اجلاس کے دوران ایوان میں بدنظمی کے بعد اسپیکر نے (ن) لیگ کے 6 اراکین پر ایوان میں داخلے پر پابندی عائد کی تھی جس کے خلاف اپوزیشن اراکین اسمبلی کی سیٹرھیوں پر بیٹھ کر احتجاج کر رہے ہیں۔

پابندی کے حامل ارکان میں محمد اشرف رسول، محمد وحید، یاسین عامر، مرزا جاوید، زیب النساء اور طارق مسیح شامل ہیں جن کی تصاویر بھی اسمبلی سیکیورٹی اسٹاف کو جاری کی گئی ہیں اور سرکلر میں کہا گیا ہے کہ انہیں ایوان میں آنے نہ دیا جائے۔

پنجاب اسمبلی میں دو روز کے وقفے کے بعد اپوزیشن کے بغیر اجلاس جاری ہے جس میں بجٹ پر بحث ہورہی ہے۔

اسمبلی کی سیڑھیوں پر بیٹھے احتجاجی اراکین سے خطاب کرتے ہوئے ایوان میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز نے کہا کہ ایسا شخص اسپیکر کی کرسی پر براجمان ہے جس نے 12 ووٹ چوری کیے، پرویز الہیٰ نے کہا تھا کہ مشرف کو 10 بار وردی میں منتخب کریں گے۔

حمزہ شہباز نے کہا کہ پرویز الہٰی کا لب و لہجہ اسپیکر سے زیادہ تھانیدار کا لگتا ہے اور انہوں نے خواتین کے لیے بھی توہین آمیز لفظ استعمال کیا۔

قائد حزب اختلاف نے اعلان کیا کہ جب تک ہمارے 6 اراکین پر ایوان میں داخلے پر عائد پابندی ہٹائی نہیں جاتی اس وقت تک اجلاس میں شرکت نہیں کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*