تازہ ترین
outline

نیوزی لینڈ :پارلیمنٹ اجلاس کا قرآن کی تلاوت سے آغاز،وزیراعظم نے اسلام علیکم کہہ کر تقریر شروع کی

نیوزی لینڈ کے علاقے کرائسٹ چرچ کی مسجد النور میں دہشتگردی کی اندوہناک واردات کے بعد پارلیمنٹ کا اجلاس شروع ہوا تو ایک نئی تاریخ رقم ہوگئی-غیر معمولی طور پر اجلاس کے آغاز سے قبل قرآن پاک کی تلاوت کی گئی اور نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا نے اپنی تقریر کا آغاز اسلام علیکم سے کیا

دہشتگردی کے واقعہ کے بعد بلائے گئے خصوصی اجلاس میں ں اسپیکر ٹریور مالارڈ کی جانب سے تمام مذہبی رہنمائوں کو شرکت کی خصوصی دعوت دی گئی تھی

وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن نے اپنے ابتدائی خطاب کے دوران عہد کیا کہ وہ کرائسٹ چرچ کی دو مساجد میں حملہ کرنے والے حملہ آور کا نام کبھی نہیں لیں گی

وزیراعظم جیسنڈا نے کہا کہ دہشتگرد کے کئی مقاصد تھے جن میں سے ایک شہرت کو حصول بھی تھا اس لیئے آپ کبھی مجھے اس کا نام لیتے نہیں سنیں گے

جیسنڈا آرڈرن نے کہا کہ ’ان کا نام لیں جنہیں اس حادثے میں کھودیا نہ کہ اس شخص کا جو اس کا ذمہ دار ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ ’ اسے شاید شہرت کی تلاش ہوگی لیکن ہم نیوزی لینڈ میں اسے کچھ نہیں دیں گے،

اس سے قبل جب پارلیمنٹ کا خصوصی اجلاس شروع ہونا تھا تو اس کا آغاز قرآن پاک کی سورۃ البقرہ کی آیات 153-156 کی تلاوت سے ہوا۔

واضح رہے کہ سورۃ البقرہ کی ان آیات میں ایمان والوں کو صبر کی تلقین کی گئی ہے جبکہ اللہ کی راہ میں مارے جانے والوں کو مردہ نہ کہنے کا حکم ہے، ان آیات میں جان و مال سے آزمائے جانے کا بھی ذکر ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*