تازہ ترین
outline

مسعود اظہر کو عالمی دہشتگرد قرار دینے کی قرارداد چین نے ایک بار پھر ویٹو کردی

چین نے پاکستان کی کالعدم تنظیم جیش محمد کے سربراہ مولانا مسعود اظہر کو اقوام متحدہ کی جانب سے عالمی دہشتگرد قرار دینے کی قرارداد کو تکنیکی بنیادوں پر ویٹو کرکے یہ کوشش ناکام بنادی ہے

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں امریکا، فرانس، اور برطانیہ کی جانب سے مولانا مسعود اظہر کو دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کرنے کے لیے قرارداد 27 فروری کو پیش کی گئی تھی لیکن سکیورٹی کونسل کے مستقل رکن چین نے ‘ٹیکنیکل ہولڈ’ کی بنیاد پر یہ کوشش ناکام بنادی ہے

عالمی میڈیا کے مطابق چین کی طرف سے چوتھی بار مولانا مسعود اظہر کو عالمی دہشتگرد قرار دینے کی قرارداد کو ویٹو کیا گیا ہے

مسعود اظہر کو عالمی دہشتگرد قرار دینے کی اس قرارداد کو ویٹو کرنے کے بعد چین کے وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ چین کی حکومت سیکیورٹی کونسل میں اپنا ذمہ دارانہ کردار ادا کرتی رہے گی۔

واضح رہے کہ مسعود اظہر کو عالمی دہشتگرد قرار دینے کی تجویز 14 فروری کو ضلع پلوامہ میں ہونے والے ایک خود کش حملے کے بعد اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی 1267 سینکشنز کمیٹی کے تحت دی گئی تھی۔

اس سے قبل سنہ 2001 میں سلامتی کونسل مسعود اظہر کی تنظیم جیشِ محمد کو بھی دہشت گرد تنظیم قرار دے چکی ہے جبکہ 2002 میں پاکستان نے بھی اس تنظیم کو کالعدم قرار دیا تھا۔

قبل ازیں امریکی اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں مسعود اظہر کو عالمی دہشت گرد قرار دینے کی قرار داد پیش کی جائے گی تاہم سلامتی کونسل کے مستقل رکن اور ماضی میں ان کوششوں کو روک دینے والے چین کا کہنا تھا کہ ’معاملے کا ذمہ دارانہ حل‘ صرف بات چیت کے ذریعے ہی ممکن ہے۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان ’لو کانگ‘ نے سوال کے جواب میں عالمی برادری کو اس قسم کے مسائل اجاگر کرنے کے ساتھ مسئلہ کشمیر کی جانب بھی توجہ دینے کا کہا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*