تازہ ترین
outline
shaukat aziz pervaiz muhsraf

بروقت انصاف کی عمدہ مثال ،پرویز مشرف کے دو عہدوں کےخلاف درخواست کی سماعت آج ہوگی

ہمارے ہاں انصاف کا بروقت حصول کس قدر سستا اور آسان ہے اس کی تازہ ترین مثال آئین پر شب خون مارنے والے ڈکٹیٹر جنرل پرویز مشرف کے دو عہدوں کے خلاف درخواست ہے جس پر آج گیارہ برس بعد دوبارہ سماعت ہو گی

جب جنرل پرویز مشرف عنان اقتدار پر قابض تھے اور چیف جسٹس افتخار چوہدری کی جبری معزولی کے خلاف فیصلہ آنے کے بعد عدلیہ کا وقار بحال ہو چکا تھا تو سپریم کورٹ میں پرویز مشرف کے دو عہدوں کے خلاف درخواست دائر کی گئی

سپریم کورٹ میں 2007ءکو دائر ہونے والی ان درخواستوں میں استدعا کی گئی کہ کوئی بھی سرکاری ملازم سیاست میں حصہ نہیں لے سکتا تو جنرل پرویز مشرف باوردی صدر کیسے منتخب ہو سکتے ہیں

جسٹس خلیل الرحمان رمدے کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے بنچ نے کئی ماہ کی سماعت کے بعد پرویز مشرف کو عبوری طور پر الیکشن لڑنے کی اجازت دیدی اور کہا کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے تک ان کی کامیابی کا نوٹیفکیشن جاری نہ کیا جائے

بعد میں پرویز مشرف نے ایمرجنسی لگا کر ججوں کو گھروں میں قید کر دیا اور بطور صدر مملکت حلف اٹھا لیا ۔بعد ازاں عدلیہ بحال ہونے کے بعد بھی یہ مقدمہ سر دخانے میں رہا اور آج جب پلوں کے نیچے بہت سا پانی گذر چکا ہے تو اسے سماعت کے لیئے مقرر کیا گیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*