تازہ ترین
outline
pak vs west indies

سری لنکا کو شکست ،پاکستان اور انگلینڈ سیمی فائنل میں مدمقابل ہونگے

کارڈف(اسپورٹس ڈیسک)پاکستان نے سنسنی خیز مقابلے کے بعد سری لنکا کا شکست دیدی ہے اور اب سیمی فائنل میں انگلینڈ اور پاکستان کی ٹیمیں آمنے سامنے ہونگی-
پاکستان نے ٹاس جیت کر سری لنکا کو پہلے بیٹنگ کی دعوت دی تو اس کی پوری ٹیم 236 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی۔ جواب میں پاکستان نے کپتان سرفراز احمد اور محمد عامر کی عمدہ بیٹنگ کی بدولت 237 رنز کا ہدف 46 ویں اوور میں حاصل کر لیا۔
اس فتح کے ساتھ ہی پاکستان نے چیمپیئنز ٹرافی کے سیمی فائنل میں جگہ بنا لی ہے جہاں اس کا مقابلہ میزبان اور اس ٹورنامنٹ میں اب تک ناقابل شکست رہنے والی انگلینڈ کی ٹیم سے ہوگا۔
اس میچ میں کامیابی کا سہرا جہاں سرفراز کی انتہائی نازک صورت حال میں نصف سنچری کو دیا جائے گا وہیں اس میں سری لنکا کے فیلڈرز کا بھی اتنا ہی بڑا حصہ ہے۔
سری لنکا میں اس میچ کا جب بھی ذکر ہوگا تو اس کیچ کا تدکرہ ضرور ہو گا جو پریرا نے ملنگا کی گیند پر شارٹ مڈ آن پر گرا دیا۔ کرکٹ کی اصطلاح میں اسے ڈولی کہا جاتا ہے۔ اتنا آسان کیچ اتنے بڑے میچ میں چھوڑنا واقعتاً میچ گرا دینے کے مترادف تھا۔
قسمت کی دیوی سرفراز پر آج پوری طرح مہربان تھی۔ اس کے بعد ان کا ایک اور کیچ چھوٹا جو نسبتاً مشکل ضرور تھا لیکن ناممکن نہیں تھا۔ صرف یہی کیچ ہی نہیں اس دوران سرفراد کئی مرتبہ رن آوٹ ہوتے بال بال بچے۔
نتیجتاً سرفراز احمد اور محمد عامر نے آٹھویں وکٹ کی شراکت میں ناقابلِ شکست 75 رنز بنا کر اپنی ٹیم کو فتح سے ہمکنار کیا۔
پاکستان کی اس اننگز میں اگر محمد عامر کا ذکر نہ کیا جائے تو یہ صریحاً زیادتی ہو گی۔ انھوں نے اس میچ میں اس ٹورنامنٹ میں اپنی پہلی وکٹ بھی حاصل کی اور پھر جس ذمہ دارانہ انداز میں بیٹنگ کی اور انتہائی قیمتی 28 رنز بنائے وہ میچ جیتنے میں بہت اہم رہے۔
آخری چوکا جو سرفراز نے تھرڈ مین کی طرف لگایا اور اس کے بعد خوشی میں انھوں نے جو چھلانگیں لگائیں اس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ یہ میچ کیسے بری طرح پھنس گیا تھا۔
سرفراز احمد نے ناقابل شکست 61 رنز کی اننگز کھیلی جس میں پانچ چوکے بھی شامل ہیں۔
سرفراز اور محمد عامر کے علاوہ نوجوان بلے باز فخر زمان نے بھی پاکستان کی اس فتح میں اہم کردار ادا کیا اور ایک بار پھر پاکستان کو بہتر آغاز فراہم کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*