outline

سوڈان میں فوجی بغاوت،صدر عمر البشیر گرفتار ،ایمرجنسی نافذ

سوڈان میں کئی روز سے جاری احتجاجی مظاہروں کے بعد فوج نے اقتدار پر قبضہ کرکے صدر عمر البشیر کو گرفتار کرکے ملک میں ایمرجنسی نافذ کر دی ہے

فوجی بغاوت کی باضابطہ اطلاع دیتے ہوئے وزیر دفاع عود ابن عوف نے سرکاری ٹی وی کو بتایا کہ سوڈان کی فوج نے ملک کے انتظامی امور سنبھال لیے ہیں اور دو سال کے عرصے میں ملک میں انتقال اقتدار کے عمل کو مکمل کیا جائے گا جس کے بعد عام انتخابات منعقد ہوں گے

واضح رہے کہ گزشتہ 6 روز سے صدر عمر حسن البشیر کے خلاف احتجاجاً ہزاروں افراد آرمی ہیڈ کوارٹر کے باہر جمع تھے جہاں صدر کی رہائش گاہ اور وزارت دفاع کا دفتر بھی ہے

سوڈان میں صدر عمر البشیر سنہ 1989 سے برسراقتدار تھے مگر ان کے خلاف چند روز قبل احتجاج کی لہر اٹھی جس نے رفتہ رفتہ پورے ملک کو لپیٹ میں لے لیا

وزیر دفاع جنرل عوض بن عوف کے مطابق فوج کو امید تھی حکومت وقت اپنی روش تبدیل کرکے ملک کو تباہی کی جانب جانے بچائے، تاہم صدر البشیر نے عوامی احتجاج پر کان نہ دھرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے مظاہرین کا قتل عام شروع کردیا تھا۔

جنرل عوف نے مزید کہا کہ جنرل عمر حسن البشیر کو معزول کردیا گیا اور انھیں ساتھیوں کے ساتھ حراست میں لے کر محفوظ مقام میں منتقل کردیا گیا ہے

وزیر دفاع نے مزید کہا کہ ملک کے آئین کو عارضی طور پر معطل کیا جا رہا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ سوڈان کی سرحدیں اگلے اعلان کیے جانے تک بند ہیں جبکہ ملک کی فضائی حدود اگلے24 گھنٹے کے لیے بند کی گئی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*