تازہ ترین
outline

ایاز صادق ،پرویز خٹک کی معافی قبول ،عمران خان سے بیان حلفی اور معافی نامہ طلب

الیکشن کمیشن آف پاکستان نے نے چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کے خلاف ووٹ کی رازادی ظاہر کرنے سے متعلق مقدمے کی سماعت کرتے ہوئے معافی نامہ مسترد کر دیا ہے جبکہ ایک اور مقدمہ جو انتخابی مہم کے دوران نازیبا زبان استعمال کرنے سے متعلق ہے اس میں الیکشن کمیشن نےعمران خان ،ایاز صادق ،مولانا فضل الرحمان اور پرویز خٹک کے معافی نامے قبول کرتے ہوئے کارروائی ختم کرنے کا فیصلہ سنا دیا ہے 

الیکشن کمشنر کی سربراہی میں 4 رکنی بینچ نے سابق وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا اور اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق کے خلاف ناشائستہ زبان استعمال کرنے پر ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کے کیس کی سماعت کی

ایاز صادق کے وکیل کامران مرتضیٰ نے مؤقف اپنایا کہ وہ اپنے مؤکل کی جانب سے دست بستہ معافی مانگتا ہوں۔

اس موقع پر چیف الیکشن کمشنر کی ہدایت پر ایاز صادق کا ویڈیو کلپ چلایا گیا، چیف الیکشن کمشنر نے ریمارکس دیئے کہ دیکھیں ایاز صادق کہہ رہےہیں کہ الیکشن کمیشن کی اوقات کیا ہے، اس پر ایاز صادق کے وکیل نے ایک بار پھر معافی مانگی۔

جس پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ آج ایاز صادق نے اپنے اوقات دیکھ لی –

جب کہ پی ٹی آئی کے رہنما پرویز خٹک نے بھی ناشائستہ زبان کے استعمال پر الیکشن کمیشن سے معافی مانگی جس پر دونوں کے خلاف کیس کا فیصلہ محفوظ کرلیا گیا۔

یاد رہے کہ 25 جولائی کو ہونے والے عام انتخابات میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان اپنا ووٹ کاسٹ کرنے این اے 53 اسلام آباد کے پولنگ اسٹیشن پر گئے جہاں انہوں نے پولنگ بوتھ کے پیچھے جاکر مہر لگانے کی بجائے میڈیا کے سامنے ہی بیلٹ پیپر پر مہر لگائی جس کا الیکشن کمیشن نے نوٹس لیا

چیف الیکشن کمشنر سردار رضا کی سربراہی میں 4 رکنی بینچ عمران خان کے خلاف انتخابی رازداری ظاہر کرنے کے از خود نوٹس کی سماعت کررہا ہے جس سلسلے میں ان کے وکیل بابر اعوان کمیشن کے سامنے پیش ہوئے اور تحریری جواب جمع کرایا۔

تحریری جواب میں کہا گیا ہےکہ عمران خان نے جان بوجھ کرووٹ نہیں دکھایا، ان کی مرضی سے ووٹ کی تصاویر بھی نہیں لی گئیں، رش کے باعث مہر لگانے والی جگہ کا پردہ گرگیا تھا، عمران خان نے پوچھا تھا کہاں کھڑے ہوکر مہرلگاؤں۔

جواب میں استدعا کی گئی ہےکہ ووٹ دکھانے میں میرے مؤکل کی مرضی شامل نہیں لہٰذا ووٹ کی رازداری افشا کرنے والا کیس ختم کرکے این اے 53 سے روکا گیا نوٹی فکیشن جاری کیا جائے۔

چیف الیکشن کمشنر نے عمران خان کے وکیل کی جانب سے معافی کی درخواست مسترد کرتے ہوئے چیئرمین تحریک انصاف سے بیان حلفی سمیت ان کا دستخط شدہ معافی نامہ طلب کرلیا۔

الیکشن کمیشن نے حکم دیا کہ عمران خان معافی نامہ اپنے دستخط کے ساتھ جمع کروائیں، کیس کی مزید سماعت کل تک ملتوی کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*