outline

مگر بالاکوٹ میں تو کوئی میڈیکل کالج ہی نہیں

بھارتی میڈیا بالاکوٹ حملے میں ہلاکتوں کے دعوے کو سچ ثابت کرنے کے لیئے ایڑی چوٹی کا زور لگارہا ہے لیکن ابھی تک اس قسم کی کوششیں بری طرح ناکام ہوئی ہیں

چند روز قبل بھارتی میڈیا نے ایک مبینہ آڈیو ٹیپ جاری کی جس میں دو لوگ ٹیلیفون پر بات کرتے ہوئے حملہ کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں یہ یہ آڈیو ٹیپ اس قدر بھونڈے انداز میں ریکارڈ کی گئی ہے کہ سننے والوں کی ہنسی چھوٹ جاتی ہے اوریوں معلوم ہوتا ہے جیسے کسی کامیڈی فلم کے دو کردار بات کر رہے ہوں

اب ایک مبینہ واٹس ایپ چیٹ کے ذریعے یہ ثابت کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ بالا کوٹ حملے میں ہلاکتیں ہوئیں -سوشل میڈیا پر زیر گردش واٹس ایپ چیٹ کے سکرین شاٹ میں پاکستانی ڈاکٹر کے ذریعے یہ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ اس حملے میں 292 دہشتگرد مارے گئے

سوشل میڈیا پر شیئر ہو رہے اسکرین شاٹ ایک مبینہ پاکستانی “ڈاکٹر اعجاز“ کی اپنے بھارتی دوست کیساتھ واٹس ایپ پر چیٹ سے متعلق ہیں

اس مبینہ چیٹ کے دوران بھارتی شہری پوچھتا ہے “ ارے بھائی یہ کیا ہے، بھارتی فوج نے جو ایئر سٹرائک کی ہے۔۔۔۔ کیا یہ سچی خـبر یا میڈیا یوں ہی دکھا رہی ہے؟“

پاکستانی ڈاکٹر جواب دیتا ہے“جناب، ایئرفورس کے کچھ جہاز بالاکوٹ اور نزدیکی علاقے میں گھس گئے تھے۔۔۔ لیکن یہ غلط ہے نا، ایل او سی پار کرنا۔۔۔ خیر اللہ رحم کرے“

ہندوستانی شہری کا استدلال ہے کہ “کچھ 12 طیارے گئے تھے لیکن یار پاکستان کا جیش محمد حملہ کرواتا ہے تو انڈیا جواب تو دے گا ہی نا۔۔۔ اور بھائی یہ بتاؤ کتنے لوگ مارے گئے؟“

پاکستانی ڈاکٹر کہتا ہے کہ کوئی مقامی شخص نہیں مارا گیا ، 292 لوگ جو مارے گئے سب کے سب دہشتگرد تھے ،ان میں سے پانچ حاملہ خواتین بھی تھیں

بھارتی شہری پوچھتا ہے کہ آپ کو یہ کیسے معلوم ہوا کہ 292 لوگ ہی مارے گئے؟مبینہ پاکستانی ڈاکٹر جواب دیتا ہے کہ اس کی والدہ بالاکوٹ میڈیکل یونیورسٹی کی ڈین ہیں ،انہیں صبح ٹیلیفون کال کرکے بلایا گیا اور یہ ساری معلومات ان سے ہی ملی ہیں

اگرچہ آئی ٹی کے ماہرین بھی اس اسکرین شاٹ کو جعلی قرار دے چکے ہیں مگر چونکہ جھوٹ کے پائوں نہیں ہوتے اس لیئے جعلسازوں نے یہ معلوم کرنے کا تردد ہی نہ کیا کہ بالاکوٹ میں کوئی میڈیکل یونیورسٹی یا کالج ہے بھی یا نہیں-

بالاکوٹ چھوٹا سا شہر ہے جہاں بنیادی مرکز صحت کے علاوہ کوئی اسپتال ہی موجود نہیں۔بنیادی مرکز صحت میں صرف ایک ڈاکٹر ہوتا ہے جو کھانسی ،بخار جیسے چھوٹے موٹے عمومی مسائل کے علاوہ کوئی سہولت فراہم نہیں کر سکتا

بالا کوٹ کے لیئے قریب ترین میڈیکل کالج ایبٹ آباد میں ہے جہاں کوئی خاتون ڈاکٹر ڈین نہیں -سچ کہتے ہیں جھوٹ کے پائوں نہیں ہوتے

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*