تازہ ترین
outline
Featured Video Play Icon

اٹک کے گائوں “نکا قاتلاں “کا خادم حسین،علامہ خادم رضوی کیسے بنا ؟

آسیہ بی بی کی رہائی کے بعد ٹانگوں سے معذور شخص علامہ خادم حسین رضوی نے ایک بار پھرحکومت کو اپاہج کر دیا ہے ،وہ اس سے پہلے بھی فیض آباد دھرنے سمیت کئی مواقع پر پورے ملک کو یرغمال بنانے کا مظاہرہ کر چکے ہیں

علامہ خادم حسین رضوی کون ہیں ؟اور اچانک ایک بڑے مذہبی رہنما کے طور پر ابھر کر کیسے سامنے آئے؟علامہ خادم رضوی کا تعلق ضلع اٹک کے ایک چھوٹے سے گائوں “نکا کلاں “سے ہے جسے جرائم پیشہ افراد اور قتل کی لرزہ خیز وارداتوں کے باعث “نکا قاتلاں“ بھی کہا جاتا ہے مگر اب اس گائوں کو خادم رضوی کی مناسبت سے “نکابابا جی“ بھی کہا جاتا ہے

تریپن سالہ خادم رضوی چند برس قبل 2006ء میں ایک ٹریفک حادثے کےدوران زخمی ہو گئے -لاہور میں علاج ہوا مگر ٹانگوں سے معذور ہو گئے -مولانا نے خود تو کبھی اس علاج سے متعلق گفتگو نہیں کی مگر ان کے قریبی لوگ دعویٰ کرتے ہیں کہ حادثے کے بعد مولانا کا علاج مخالف مکتبہ فکر کے ڈاکٹر نے کیا اور اس نے جان بوجھ کر کچھ ایسا کام کیا کہ مولانا چل پھر نہ سکیں

خادم رضوی لاہور میں محکمہ اوقاف کی زیرنگرانی چلنے والی مسجد پیر مکی میں نویں گریڈ کے امام تھے۔ وہ اپنی زندگی پر مطمئن تھے مگر ممتاز قادری کی پھانسی کے بعد بغاوت کرتے ہوئے ممتاز قادری کی حمایت میں دھرنوں میں شرکت کی۔ پنجاب حکومت کی جانب سے تنبیہہ کے باوجود باغیانہ روش ترک نہ کی۔ نتیجتاً حکومت نے انہی سرکاری امام کی نوکری سے فارغ کردیا

علامہ خادم رضوی نے فیض آباد دھرنے کے دوران حکومت وقت کو للکارا تو یہ افواہیں گردش کرنے لگیں کہ انہیں اسٹیبشلمنٹ کی حمایت حاصل ہے -آرمی چیف نے وزیراعظم کو ٹیلفون کرکے تجویز دی کہ عدم تشدد کی راہ اپنائی جائے اور اس مسئلے کا پرامن حل نکالا جائے – جب پولیس نے آپریشن کیا تو مظاہرین کے پسپا ہونے کے بعد اچانک انہیں کہیں سے کمک ملی اور ان کے قدم پھر سے جم گئے- جب آئی ایس آئی کے ڈی جی کائونٹر ٹیررازم میجر جنرل فیض حمید نے ایک معائدے کے ذریعے یہ دھرنا ختم کروایا اور پھر پنجاب کے ڈی جی رینجرز میجر جنرل اظہر نوید نے دھرنے کے شرکا میں ایک ایک ہزار روپے نقدی والے لفافے تقسیم کیئے تو ان افواہوں کو مزید تقویت ملی

بعد ازاں جب سپریم کورٹ میں فیض آباد دھرنے کی سماعت شروع ہوئی تو آئی ایس آئی کی ایک رپورٹ میں کہا گیا کہ خادم رضوی اونچے عہدے والوں کے سامنے مغرور اور ماتحتوں سے بدتمیزی سے پیش آتے ہیں-

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

*